مست سحر و توبہ کناں شام کا ہوں میں

محمد رفیع سودا

مست سحر و توبہ کناں شام کا ہوں میں

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    مست سحر و توبہ کناں شام کا ہوں میں

    قاضی کے گرفتار نت اعلام کا ہوں میں

    بندہ کہو خادم کو چاکر کہو مجھ کو

    جو کچھ کہو سو ساقیٔ گلفام کا ہوں میں

    خدمت میں مجھے عشق کی ہے دل سے ارادت

    نے معتقد کفر نہ اسلام کا ہوں میں

    یک روز حلال اس کو بھی میں کر کے نہ کھایا

    نوکر جو خرابات میں دو جام کا ہوں میں

    نے فکر ہے دنیا کی نہ دیں کا متلاشی

    اس ہستئ موہوم میں کس کام کا ہوں میں

    یک رنگ ہوں آتی نہیں خوش مجھ کو دو رنگی

    منکر سخن و شعر میں ایہام کا ہوں میں

    مطلوب دعا حق میں نہیں اپنے کسو کی

    طالب لب محبوب سے دشنام کا ہوں میں

    بندہ ہے خدا کا تو یقیں کر کہ بتاں کا

    بندہ یہ جہاں بے زر و بے دام کا ہوں میں

    ہے شیشۂ مے عینک پیری مجھے سوداؔ

    نظارہ کن اب شیب کے ایام کا ہوں میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY