موت آئی آنے دیجیے پروا نہ کیجیے

یگانہ چنگیزی

موت آئی آنے دیجیے پروا نہ کیجیے

یگانہ چنگیزی

MORE BYیگانہ چنگیزی

    دلچسپ معلومات

    (1920ء)

    موت آئی آنے دیجیے پروا نہ کیجیے

    منزل ہے ختم سجدۂ شکرانہ کیجیے

    زنہار ترک لذت ایذا نہ کیجیے

    ہرگز گناہ عشق سے توبہ نہ کیجیے

    نا آشنائے حسن کو کیا اعتبار عشق

    اندھوں کے آگے بیٹھ کے رویا نہ کیجیے

    تاکہ خبر بھی لائیے ساحل کے شوق میں

    کوشش بقدر ہمت مردانہ کیجیے

    وہ دن گئے کہ دل کو ہوس تھی گناہ کی

    یادش بخیر ذکر اب اس کا نہ کیجیے

    ساون میں خاک اڑتی ہے دل ہے رندھا ہوا

    جی چاہتا ہے گریۂ مستانہ کیجیے

    دیوانہ وار دوڑ کے کوئی لپٹ نہ جائے

    آنکھوں میں آنکھیں ڈال کے دیکھا نہ کیجیے

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Yagana (Pg. 287)
    • Author : Meerza Yagana Changezi Lukhnawi
    • مطبع : Farib Book Depot (P) Ltd. (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے