موت کی زد کا خطر ہر فرد کو ہر گھر میں ہے

جوشؔ ملسیانی

موت کی زد کا خطر ہر فرد کو ہر گھر میں ہے

جوشؔ ملسیانی

MORE BY جوشؔ ملسیانی

    موت کی زد کا خطر ہر فرد کو ہر گھر میں ہے

    یہ بڑا اک عیب اے دنیا تری چوسر میں ہے

    منزل مقصود پر پہنچے تو پہنچے کس طرح

    ڈھونڈنے والا امید و بیم کے چکر میں ہے

    شیخ سے کچھ ضد نہیں ہے برہمن سے کد نہیں

    دیر و کعبہ دونوں کا جوہر مرے ساغر میں ہے

    فکر امروز و غم فردا سراسر بے محل

    تو اگر گھر میں ہے تو سب کچھ ہمارے گھر میں ہے

    دم بخود فتنے ہیں ان کی شوخئ رفتار سے

    ایک سناٹے کا عالم عرصۂ محشر میں ہے

    میری ہی روداد وحشت سن کے فریادی ہیں سب

    چاک میرے ہی جگر کا دامن محشر میں ہے

    نقش الفت مٹ گیا تو داغ لفت ہیں بہت

    شکر کر اے دل کہ تیرے گھر کی دولت گھر میں ہے

    اس سے کیا مطلب کہ ہے کس کس کے دل میں شوق قتل

    دیکھنا یہ ہے کہ دم کتنا ترے خنجر میں ہے

    سلسلہ آوارگی کا فہم سے باہر ہے جوشؔ

    میں بھی چکر میں ہوں میری عقل بھی چکر میں ہے

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY