موت کو زیست ترستی ہے یہاں

مختار صدیقی

موت کو زیست ترستی ہے یہاں

مختار صدیقی

MORE BYمختار صدیقی

    موت کو زیست ترستی ہے یہاں

    موت ہی کون سی سستی ہے یہاں

    دم کی مشکل نہیں آساں کرتے

    کس قدر عقدہ پرستی ہے یہاں

    سب خرابے ہیں تمناؤں کے

    کون بستی ہے جو بستی ہے یہاں

    چھوڑو بے صرفہ ہیں ساون بھادوں

    دیکھو ہر آنکھ برستی ہے یہاں

    اب تو ہر اوج کا تارا ڈوبا

    اوج کا نام ہی پستی ہے یہاں

    مأخذ :
    • کتاب : Nuquush Lahore (Pg. 343)
    • Author : Mohd Tufail
    • مطبع : Idara Farog-e-urdu, Lahore (Feb.1956)
    • اشاعت : Feb.1956

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY