وہ کہ ہر عہد محبت سے مکرتا جائے

عالم تاب تشنہ

وہ کہ ہر عہد محبت سے مکرتا جائے

عالم تاب تشنہ

MORE BYعالم تاب تشنہ

    وہ کہ ہر عہد محبت سے مکرتا جائے

    دل وہ ظالم کہ اسی شخص پہ مرتا جائے

    میرے پہلو میں وہ آیا بھی تو خوشبو کی طرح

    میں اسے جتنا سمیٹوں وہ بکھرتا جائے

    کھلتے جائیں جو ترے بند قبا زلف کے ساتھ

    رنگ پیراہن شب اور نکھرتا جائے

    عشق کی نرم نگاہی سے حنا ہوں رخسار

    حسن وہ حسن جو دیکھے سے نکھرتا جائے

    کیوں نہ ہم اس کو دل و جان سے چاہیں تشنہؔ

    وہ جو اک دشمن جاں پیار بھی کرتا جائے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے