محراب نہ قندیل نہ اسرار نہ تمثیل

راجیندر منچندا بانی

محراب نہ قندیل نہ اسرار نہ تمثیل

راجیندر منچندا بانی

MORE BYراجیندر منچندا بانی

    محراب نہ قندیل نہ اسرار نہ تمثیل

    کہہ اے ورق تیرہ کہاں ہے تری تفصیل

    اک دھند میں گم ہوتی ہوئی ساری کہانی

    اک لفظ کے باطن سے الجھتی ہوئی تاویل

    میں آخری پرتو ہوں کسی غم کے افق پر

    اک زرد تماشے میں ہوا جاتا ہوں تحلیل

    واماندۂ وقت آنکھ کو منظر نہ دکھا اور

    ذمے ہے ہمارے ابھی اک خواب کی تشکیل

    آساں ہوئے سب مرحلے اک موجۂ پا سے

    برسوں کی فضا ایک صدا سے ہوئی تبدیل

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    محراب نہ قندیل نہ اسرار نہ تمثیل نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے