میں غش میں ہوں مجھے اتنا نہیں ہوش

بیدم شاہ وارثی

میں غش میں ہوں مجھے اتنا نہیں ہوش

بیدم شاہ وارثی

MORE BYبیدم شاہ وارثی

    میں غش میں ہوں مجھے اتنا نہیں ہوش

    تصور ہے ترا یا تو ہم آغوش

    جو نالوں کی کبھی وحشت نے ٹھانی

    پکارا ضبط بس خاموش خاموش

    کسے ہو امتیاز جلوۂ یار

    ہمیں تو آپ ہی اپنا نہیں ہوش

    اٹھا رکھا ہے اک طوفان تو نے

    ارے قطرے ترا اللہ رے جوش

    میں ایسی یاد کے قربان جاؤں

    کیا جس نے دوعالم کو فراموش

    ہے بیگانوں سے خالی خلوت راز

    چلے جائیں نہ اب آئیں مرے ہوش

    کرو رندو گناہ مے پرستی

    کہ ساقی ہے عطا پاش و خطا پوش

    ترے جلوے کو موسیٰ دیکھتے کیا

    نقاب اٹھنے سے پہلے اڑ گئے ہوش

    کرم بھی اس کا مجھ پر ہے ستم بھی

    کہ پہلو میں ہے ظالم اور روپوش

    پیو تو خم کے خم پی جاؤ بیدمؔ

    ارے مے نوش ہو تم یا بلانوش

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے