میرا اور پھولوں کا رشتہ ٹوٹ گیا

الیاس بابر اعوان

میرا اور پھولوں کا رشتہ ٹوٹ گیا

الیاس بابر اعوان

MORE BYالیاس بابر اعوان

    میرا اور پھولوں کا رشتہ ٹوٹ گیا

    کھڑکی بند ہوئی اور سپنا ٹوٹ گیا

    چڑیاں کب آنکھوں سے باتیں کرتی ہیں

    صبح ہوئی گھر کا سناٹا ٹوٹ گیا

    باغ کی ویرانی کا عینی شاہد ہوں

    تنہائی کے بوجھ سے جھولا ٹوٹ گیا

    آج بھی میرا ہاتھ پکڑ کر گھومے گی

    آج پھر اس لڑکی کا چشمہ ٹوٹ گیا

    پیڑ اور دل میں کوئی خاص تعلق ہے

    ہوا چلی اور آخری پتا ٹوٹ گیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے