میرا نشاں بھی ڈھونڈھ غبار ماہ و اختر میں

زیب غوری

میرا نشاں بھی ڈھونڈھ غبار ماہ و اختر میں

زیب غوری

MORE BYزیب غوری

    میرا نشاں بھی ڈھونڈھ غبار ماہ و اختر میں

    کچھ منظر میں نے بھی بنائے بنائے ہیں منظر میں

    پوچھو تو زخموں کا حوالہ دینا مشکل ہے

    اتنی بے ترتیبی سی ہے دل کے دفتر میں

    وہ موجوں کی تیشہ زنی سے گونجتی چٹانیں

    وہ پتھر سی رات کا ڈھلنا چاند کے پیکر میں

    اتنا یاد ہے جب میں چلا تھا سوئے دشت بلا

    موجیں مارتا اک دریا بہتا تھا برابر میں

    چمک رہا ہے خیمۂ روشن دور ستارے سا

    دل کی کشتی تیر رہی ہے کھلے سمندر میں

    زیبؔ مجھے ڈر لگنے لگا ہے اپنے خوابوں سے

    جاگتے جاگتے درد رہا کرتا ہے مرے سر میں

    مآخذ :
    • کتاب : zartaab (Pg. 71)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY