میرے اشکوں کی گئی تھی ریل ویرانے پہ کیا گزرا

ولی عزلت

میرے اشکوں کی گئی تھی ریل ویرانے پہ کیا گزرا

ولی عزلت

MORE BYولی عزلت

    میرے اشکوں کی گئی تھی ریل ویرانے پہ کیا گزرا

    خبر نیں حضرت مجنوں کے کاشانے پہ کیا گزرا

    ان آنکھوں کو دیا تھا دل وہ دیوانے پہ کیا گزرا

    پڑا تھا بات بد مستوں کے پیمانے پہ کیا گزرا

    میں اور زنار ہے تسبیح صد دانے پہ کیا گزرا

    مرے کافر ہوئے سیتی خدا جانے پہ کیا گزرا

    دیا دل وصل لینے کو بگاڑا غیر نے سودا

    بکا اس غم کے ہاتھوں میں کہ بیگانے پہ کیا گزرا

    وہ زلفیں بس رقیبوں کے دلوں کی سخت گرہیں تھیں

    کہو میرے دل صد چاک کے شانے پہ کیا گزرا

    نہ پوچھا بھول کر بھی فصل گل میں شیشہ‌ خو تو نے

    کہ اس پتھراؤ میں طفلوں کے دیوانے پہ کیا گزرا

    پھرے آتے ہیں مستاں در‌ گہ پیر مغاں سیتی

    کیا تھا خانہ ویراں شیخ میخانے پہ کیا گزرا

    ڈھکی تھی آتش گل تا سر دیوار باغ اب کے

    خبر عزلتؔ کو نیں بلبل کے خس خانہ پہ کیا گزرا

    مأخذ :
    • Deewan-e-uzlat(Rekhta Website)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY