میرے پہلو میں ہمیشہ رہی صورت اچھی

ریاضؔ خیرآبادی

میرے پہلو میں ہمیشہ رہی صورت اچھی

ریاضؔ خیرآبادی

MORE BYریاضؔ خیرآبادی

    میرے پہلو میں ہمیشہ رہی صورت اچھی

    میں بھی اچھا مری قسمت بھی نہایت اچھی

    آپ کی شکل بھلی آپ کی صورت اچھی

    آپ کے طور برے آپ سے نفرت اچھی

    حشر کے دن ہمیں سوجھی یہ شرارت اچھی

    لے چلے خلد میں ہم دیکھ کے صورت اچھی

    تجھ سے کہتا تھا کوئی یا تری تصویر سے آج

    آنکھیں اچھی تری آنکھوں کی مروت اچھی

    ہم نے سو بار شب وصل ملا کر دیکھا

    اے فلک چاند سے وہ چاند سے صورت اچھی

    نہ بنے کام تو کس کام کی نازک شکلیں

    نازک اچھے نہ حسینوں کی نزاکت اچھی

    اس سے کوئی نہیں اچھا جو تجھے پیار کرے

    میں بھی اچھا ترے صدقے مری قسمت اچھی

    تیری مدفن سے جو اٹھے وہ بری اے واعظ

    ان کے ٹھوکر سے جو اٹھے وہ قیامت اچھی

    جور تیرے بہت اچھے ستم گردوں سے

    اور ان سے تری آنکھوں کی ندامت اچھی

    منہ میں جب بات رکی چوم لیا پیار سے منہ

    دم تقریر کسی شوخ کی لکنت اچھی

    دیکھتے ہی کسی کافر کو بگڑ جاتی ہے

    میں جو چاہوں بھی تو رہتی نہیں نیت اچھی

    حسن صورت کی طرح حسن سخن ہے کم یاب

    ایک ہوتی ہے ہزاروں میں طبیعت اچھی

    تجھ سے جلتا ہے جو وہ اور جلاتے ہیں اسے

    مرے حق میں مرے دشمن کی عداوت اچھی

    آتے جاتے نظر آتی ہے جھلک چلمن سے

    پردے پردے میں نکل آئی یہ صورت اچھی

    خوگر غم کے لیے کچھ بھی نہیں عیش کا خواب

    ایسی راحت سے ہمیشہ کی مصیبت اچھی

    دے کے وہ بوسۂ لب شوق سے لیں دل میرا

    عذر کیا ہے جو ملے مال کی قیمت اچھی

    سن کے اشعار مرے سب یہی کہتے ہیں ریاضؔ

    اس کی قسمت ہے بری اور طبیعت اچھی

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY