میری دنیا سنگ و آہن ان کی دنیا چاند ستارے

نور بجنوری

میری دنیا سنگ و آہن ان کی دنیا چاند ستارے

نور بجنوری

MORE BYنور بجنوری

    میری دنیا سنگ و آہن ان کی دنیا چاند ستارے

    عقل کہاں تک دامن کھینچے عشق کہاں تک ہاتھ پسارے

    اپنی اپنی دھن میں مگن ہیں شاموں صبحوں کے متوالے

    صبح کے آنسو کون سکھائے رات کے گیسو کون سنوارے

    آبلہ پا رہ گیروں کو جھرنوں سے دل بہلانے بھی دے

    عزم جواں کو اور جواں کر اپنی منزل دور ہے پیارے

    چھم چھم چھم چھم ناچتی موجیں یہ سرگوشی کرتی جائیں

    طوفانوں کی راہ تکیں گے کب تک یہ مجبور کنارے

    نورؔ عقیدوں کے شعلوں میں روحیں جلتی دیکھ چکی ہیں

    تم بھی بتاؤ ان آنکھوں سے آنسو ٹپکیں یا انگارے

    مأخذ :
    • کتاب : Nuquush Lahore (Pg. 371)
    • Author : Mohd Tufail
    • مطبع : Idara Farog-e-urdu, Lahore (Feb.1956)
    • اشاعت : Feb.1956

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY