Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

میری جیسی اس کی حالت کب ہوگی

ارشاد عزیز

میری جیسی اس کی حالت کب ہوگی

ارشاد عزیز

MORE BYارشاد عزیز

    میری جیسی اس کی حالت کب ہوگی

    اس کو جانے مجھ سے محبت کب ہوگی

    اس کے لیے میں خود سے لڑتا رہتا ہوں

    اس کے دل کو اس سے عداوت کب ہوگی

    سب سے ہنس کے ملتی ہے وہ جب دیکھو

    وہ میری ہی صرف امانت کب ہوگی

    اس کے نام سے کتنا میں بدنام ہوا

    وہ رسوا اب میری بدولت کب ہوگی

    میں اس کی چاہت میں کتنا ٹوٹا ہوں

    اب اس کو بھی میری حسرت کب ہوگی

    مجھ کو نظر انداز وہ کرتی رہتی ہے

    اس کی جیسی میری عادت کب ہوگی

    حال دل اشعار میں اس کو کہنا ہے

    دل محفل میں اس کی صدارت کب ہوگی

    مجھ کو اس سے خوب شکایت ہے لیکن

    اس کو جانے مجھ سے شکایت کب ہوگی

    اس کا نام میں لیتا رہتا ہوں ہر دم

    میرے نام کی اس سے تلاوت کب ہوگی

    وہ غافل ہے مجھ سے سنگ دل یا اللہ

    تیری طرف سے اس کو ہدایت کب ہوگی

    کب مجھ سے انصاف کرے گا یا مولیٰ

    میرے حق میں تیری عدالت کب ہوگی

    روز محشر اس کو دل کی کہنی ہے

    یہ بتلائیں آپ قیامت کب ہوگی

    اس کی حکومت میرے دل پہ ہے تو پھر

    میرے دل سے مجھ کو بغاوت کب ہوگی

    دم گھٹتا ہے اس کی قید میں رہنے سے

    یہ بتلا ارشادؔ ضمانت کب ہوگی

    مأخذ :
    • کتاب : آہٹ دیوان عزیز (Pg. 261)
    • Author : ارشاد عزیز
    • مطبع : مرکزی پبلیکیشنز،نئی دہلی (2022)
    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے