میری کوشش ہے آئنہ بھی رہوں

ابھے کمار بیباک

میری کوشش ہے آئنہ بھی رہوں

ابھے کمار بیباک

MORE BYابھے کمار بیباک

    میری کوشش ہے آئنہ بھی رہوں

    اور ٹکرا کے ٹوٹتا بھی رہوں

    اک قفس میں خیال و بو کی طرح

    قید بھی میں رہوں رہا بھی رہوں

    خود سے کہہ لوں میں داستاں اپنی

    درد میں کچھ تو خوش نوا بھی رہوں

    ہو نہ جاؤں میں بے حسی کا شکار

    تجھ سے ملتا رہوں جدا بھی رہوں

    روز کی کشمکش کے شعلوں میں

    آگ بھی میں رہوں ہوا بھی رہوں

    شب کو ببیاکؔ کہہ رہا ہوں غزل

    تاکہ میں صبح آشنا بھی رہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY