میری شمع انجمن میں گل ہے گل میں خاک ہے

منیرؔ  شکوہ آبادی

میری شمع انجمن میں گل ہے گل میں خاک ہے

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BYمنیرؔ  شکوہ آبادی

    میری شمع انجمن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    داغ سینہ کے چمن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    داغ دل کو خاکساروں کے لگایا تو نے منہ

    غنچۂ تنگ دہن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    بعد ہر دن داغ ہے تیری کدورت کا مجھے

    صحن داماں کفن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    یا مکدر ہو کے ڈوبا ہے مرا دل اے پری

    یا تیری چاہ ذقن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    گرد غربت سے بھری ہے میرے مسکن کی بہار

    دامن صبح وطن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    داغداروں نے کدورت سے بنا ان کا پلنگ

    سنبل موج رسن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    وحشیٔ گیسو نے داغا ہاتھ اڑائے گرد غم

    شاخ آہوئے ختن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    داغ چھلے کا سراپے میں کدورت زا ہوا

    گل رخوں نخل بدن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    بن گیا ہے شیشۂ ساعت مگر فانوس شمع

    عکس شعلہ کا لگن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    ساگروں کی پھول پینے سے ہوئی مٹی خراب

    جام مے باغ سخن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    گرد ظلمت ڈالی لالے پر خزاں نے اے فلک

    چاند کے بدلے گہن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    بالوں میں چھپ کر کرن پھول ان کا مٹی ہو گیا

    افعئ گیسو کے پھن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    داغ دے کر ملتے ہیں یہ شمع رو مٹی کا عطر

    رخت اہل انجمن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    عنصر خاکی ہوا برباد اہل داغ کا

    ان دنوں وحشت کے بن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    زخم سر پر ڈالتا ہوں ان بتوں کی گرد راہ

    اب کلاہ برہمن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    پھول پی پی کر مکدر ہو رہا ہے وہ صبیح

    دیکھ لو نخل سمن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    ہے مکدر نور مہر اس رشک گل کے ہجر میں

    گلشن چرخ کہن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    میرے دل میں داغ ہے ہر داغ میں ہے گرد غم

    عندلیبو اس چمن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    پردہ میں ہے پھول سا منہ اور منہ پہ گرد خط

    اس سحر کے پیرہن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    ماتھے پر ہے داغ سجدہ داغ میں گرد سجود

    خط قسمت کی شکن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    گرد کلفت لائے ہے فصل بہاری اپنے ساتھ

    شاخ ہر نخل چمن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    کیا کہوں اس مصرعہ فرمائشی میں اے منیرؔ

    ہے ہرن گل میں ہرن میں گل ہے گل میں خاک ہے

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY