مل گیا دل نکل گیا مطلب

حسن بریلوی

مل گیا دل نکل گیا مطلب

حسن بریلوی

MORE BYحسن بریلوی

    مل گیا دل نکل گیا مطلب

    آپ کو اب کسی سے کیا مطلب

    حسن کا رعب ضبط کی گرمی

    دل میں گھٹ گھٹ کے رہ گیا مطلب

    نہ سہی عشق دکھ سہی ناصح

    تجھ کو کیا کام تجھ کو کیا مطلب

    مژدہ اے دل کہ نیم جاں ہوں میں

    اب تو پورا ہوا ترا مطلب

    اپنے مطلب کے آشنا ہو تم

    سچ ہے تم کو کسی سے کیا مطلب

    آتش شوق اور بھڑکی ہے

    منہ چھپانے کا کھل گیا مطلب

    کچھ ہے مطلب تو دل سے مطلب ہے

    مطلب دل سے ان کو کیا مطلب

    ان کی باتیں ہیں کتنی پہلو دار

    سب سمجھ لیں جدا جدا مطلب

    اس کو گھر سے نکال کر خوش ہو

    کیا حسنؔ تھا رقیب کا مطلب

    مأخذ :
    • کتاب : Intekhab-e-Sukhan(Jild-2) (Pg. 130)
    • Author : Hasrat Mohani
    • مطبع : uttar pradesh urdu academy (1983)
    • اشاعت : 1983

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY