مل جائے کسی شام کسی رات کسی دن

مرغوب علی

مل جائے کسی شام کسی رات کسی دن

مرغوب علی

MORE BYمرغوب علی

    مل جائے کسی شام کسی رات کسی دن

    وہ میرے تصور کی ملاقات کسی دن

    احباب نے اک شخص تراشا ہے عجب سا

    اس کو بھی یہاں لائیں گے ہم ساتھ کسی دن

    خوابوں کے بہت پھول مہکتے ہیں لبوں پر

    تعبیر کی ہو جائے کوئی بات کسی دن

    وہ آنکھ جو صحرا کی طرح ہے یک و تنہا

    اس راہ میں رکھ دو کوئی برسات کسی دن

    بے خوف ہواؤں کا ابھی زور ہے قائم

    موسم کی طرح بدلیں گے حالات کسی دن

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY