مل جل کر ایمان خدا پر لا سکتے ہیں

سرفراز زاہد

مل جل کر ایمان خدا پر لا سکتے ہیں

سرفراز زاہد

MORE BYسرفراز زاہد

    مل جل کر ایمان خدا پر لا سکتے ہیں

    اک جنت میں بھوک اور پیاس سما سکتے ہیں

    آپ اگر سمجھا دیں خال و خد منظر کے

    ہم اپنی حیرت کا نام بتا سکتے ہیں

    میرے کھلیانوں سے اٹھتے آگ کے شعلے

    جھونکے تیرے باغوں تک پھیلا سکتے ہیں

    کمرے کے دم گھٹ جانے کا خوف نہ ہو تو

    ہم اپنی تنہائی کو دہرا سکتے ہیں

    نیند اڑا سکتے ہیں دشمن کے لشکر کی

    ملکہ کے خوابوں سے پھول چرا سکتے ہیں

    آپ اگر پلکوں کی چوکھٹ تک آ جائیں

    ہم اپنی تصویر سے باہر آ سکتے ہیں

    لمحہ اتنی گنجائش رکھتا ہے خود میں

    آپ اس میں آنے سے پہلے جا سکتے ہیں

    ہم بے چین کھلونے اک دن موڈ میں آ کر

    جسموں کے شو کیس سے باہر آ سکتے ہیں

    کر سکتے ہیں دریا کو اک مصرعے میں قید

    اور صحرا کو گھر کی راہ دکھا سکتے ہیں

    پلکوں کی درزوں سے جھانکنے والے اک دن

    رخساروں پر آ کر شور مچا سکتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY