ملی بھی کیا در دولت سے کار عشق کی داد

سحر انصاری

ملی بھی کیا در دولت سے کار عشق کی داد

سحر انصاری

MORE BYسحر انصاری

    ملی بھی کیا در دولت سے کار عشق کی داد

    یہی کہ تیشۂ فرہاد بر سر فرہاد

    رخ نمو کو شکایت فقط خزاں سے نہیں

    بہار میں بھی ہوئی کشت جسم و جاں برباد

    دوام مانگ رہا ہوں گزرتے لمحوں سے

    ہے زندگی سے محبت ہی زندگی کا تضاد

    زمانے بھر کے غموں سے الگ تھلگ رہ کر

    سکوں بہت ہے مگر ہے دل سکوں برباد

    شعور غم خبر زیست اعتبار وجود

    سزا ہے یا کہ جزا ہے یہ عالم ایجاد

    متاع شعر و سخن بھی جبھی سلامت ہے

    کہ میرے لوگ مری بستیاں رہیں آباد

    مآل کوہ کن و قیس دیکھ کر بھی سحرؔ

    چلے ہیں کوئے تمنا کو ہر چہ باد اے باد

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    سحر انصاری

    سحر انصاری

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY