ملنے کی ہر آس کے پیچھے ان دیکھی مجبوری تھی

غلام محمد قاصر

ملنے کی ہر آس کے پیچھے ان دیکھی مجبوری تھی

غلام محمد قاصر

MORE BYغلام محمد قاصر

    ملنے کی ہر آس کے پیچھے ان دیکھی مجبوری تھی

    راہ میں دشت نہیں پڑتا تھا چار گھروں کی دوری تھی

    جذبوں کا دم گھٹنے لگا ہے لفظوں کے انبار تلے

    پہلے نشاں زد کر لینا تھا جتنی بات ضروری تھی

    تیری شکل کے ایک ستارے نے پل بھر سرگوشی کی

    شاید ماہ و سال وفا کی بس اتنی مزدوری تھی

    پیار گیا تو کیسے ملتے رنگ سے رنگ اور خواب سے خواب

    ایک مکمل گھر کے اندر ہر تصویر ادھوری تھی

    ایک غزال کو دور سے دیکھا اور غزل تیار ہوئی

    سہمے سہمے سے لفظوں میں ہلکی سی کستوری تھی

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    غلام محمد قاصر

    غلام محمد قاصر

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    ملنے کی ہر آس کے پیچھے ان دیکھی مجبوری تھی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY