راہ دور عشق میں روتا ہے کیا

میر تقی میر

راہ دور عشق میں روتا ہے کیا

میر تقی میر

MORE BYمیر تقی میر

    راہ دور عشق میں روتا ہے کیا

    آگے آگے دیکھیے ہوتا ہے کیا

    قافلے میں صبح کے اک شور ہے

    یعنی غافل ہم چلے سوتا ہے کیا

    سبز ہوتی ہی نہیں یہ سرزمیں

    تخم خواہش دل میں تو بوتا ہے کیا

    یہ نشان عشق ہیں جاتے نہیں

    داغ چھاتی کے عبث دھوتا ہے کیا

    غیرت یوسف ہے یہ وقت عزیز

    میرؔ اس کو رائیگاں کھوتا ہے کیا

    مآخذ :
    • کتاب : MIRIYAAT - Diwan No- 1, Ghazal No- 0071

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY