مرا ہر تیر نشانے پہ نہ پہنچا آخر

انیس انصاری

مرا ہر تیر نشانے پہ نہ پہنچا آخر

انیس انصاری

MORE BYانیس انصاری

    INTERESTING FACT

    9 June 2001

    مرا ہر تیر نشانے پہ نہ پہنچا آخر

    در سفر میں بھی ٹھکانے پہ نہ پہنچا آخر

    توتلی عمر میں جو بچہ ذرا مشفق تھا

    کچھ بڑا ہو کے دہانے پہ نہ پہنچا آخر

    جی کو سمجھاتا ہوں قسمت میں لکھا تھا سو ہوا

    کچھ سنبھل کر بھی بہانے پہ نہ پہنچا آخر

    ایک غم ہوتا تو سینے سے لگا لیتا کوئی

    غم کا انبار اٹھانے پہ نہ پہنچا آخر

    پھل کترنے کے لئے ڈار اتر آتی تھی

    بے ثمر کوئی بلانے پہ نہ پہنچا آخر

    شہر کچھ چھوٹ گئے گرد سفر لپٹی رہی

    کوئی روداد سنانے پہ نہ پہنچا آخر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY