مرا قلم مرے جذبات مانگنے والے

ظفر گورکھپوری

مرا قلم مرے جذبات مانگنے والے

ظفر گورکھپوری

MORE BYظفر گورکھپوری

    مرا قلم مرے جذبات مانگنے والے

    مجھے نہ مانگ مرا ہاتھ مانگنے والے

    یہ لوگ کیسے اچانک امیر بن بیٹھے

    یہ سب تھے بھیک مرے ساتھ مانگنے والے

    تمام گاؤں ترے بھولپن پہ ہنستا ہے

    دھوئیں کے ابر سے برسات مانگنے والے

    نہیں ہے سہل اسے کاٹ لینا آنکھوں میں

    کچھ اور مانگ مری رات مانگنے والے

    کبھی بسنت میں پیاسی جڑوں کی چیخ بھی سن

    لٹے شجر سے ہرے پات مانگنے والے

    تو اپنے دشت میں پیاسا مرے تو بہتر ہے

    سمندروں سے عنایات مانگنے والے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    ظفر گورکھپوری

    ظفر گورکھپوری

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY