مرے جوش غم کی ہے عجب کہانی

آرزو لکھنوی

مرے جوش غم کی ہے عجب کہانی

آرزو لکھنوی

MORE BYآرزو لکھنوی

    مرے جوش غم کی ہے عجب کہانی

    کبھی اٹھتا شعلہ کبھی بہتا پانی

    ہے خوشی کا سودا خلش نہانی

    ہے جگر کا چھالا ثمر جوانی

    جو خوشی ہے فانی تو ہے غم بھی فانی

    نہ یہ جاودانی نہ وہ جاودانی

    ازلی محبت ابدی کہانی

    کہ پس فنا ہے نئی زندگانی

    ستم و رضا میں یہ ہے عہد محکم

    جو تری کہانی وہ مری کہانی

    وہ اٹھیں گے طوفاں کہ خدا بچائے

    یہ نئے نظارے یہ بھری جوانی

    یہ نگاہ ترچھی یہ بل ابروؤں کا

    ہر ادا ہے دل کش مگر امتحانی

    مری کشتئ دل دم آہ و افغاں

    کبھی بادبانی تو کبھی دہانی

    در دل سے پلٹا ہر اک آنے والا

    تری یاد کیا تھی مری پاسبانی

    یہ ترا تلون یہ بدلتی چتون

    عجب اک بلا ہے کہ ہے ناگہانی

    مری کشت دل پر پئے ژالہ باری

    ہے سپید بادل عقب جوانی

    کبھی آرزو تھا یہی داغ حسرت

    مجھے جو بنا دے تری مہربانی

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY