Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

مرے پہلو سے جو نکلے وہ مری جاں ہو کر

غلام بھیک نیرنگ

مرے پہلو سے جو نکلے وہ مری جاں ہو کر

غلام بھیک نیرنگ

MORE BYغلام بھیک نیرنگ

    مرے پہلو سے جو نکلے وہ مری جاں ہو کر

    رہ گیا شوق دل زار میں ارماں ہو کر

    زیست دو روزہ ہے ہنس کھیل کے کاٹو اس کو

    گل نے یہ راز بتایا مجھے خنداں ہو کر

    اشک شادی ہے یہ کچھ مژدہ صبا لائی ہے

    شبنم آلودہ ہوا پھول جو خنداں ہو کر

    ذرۂ وادئ الفت پہ مناسب ہے نگاہ

    فلک حسن پہ خورشید درخشاں ہو کر

    شوخیاں اس نگہ زیر مژہ کی مت پوچھ

    دل عاشق میں کھبی جاتی ہے پیکاں ہو کر

    شدت شوق شہادت کا کہوں کیا عالم

    تیغ قاتل پڑی سر پہ مرے احساں ہو کر

    اب تو وہ خبط مرے عشق کو کہہ کر دیکھیں

    خود ہی آئینے کو تکنے لگے حیراں ہو کر

    مأخذ :
    • کتاب : Intekhabe Kalam (Pg. 61)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے