مرے شوق جستجو کا کسے اعتبار ہوتا

ادیب سہارنپوری

مرے شوق جستجو کا کسے اعتبار ہوتا

ادیب سہارنپوری

MORE BYادیب سہارنپوری

    مرے شوق جستجو کا کسے اعتبار ہوتا

    سر راہ منزلوں تک نہ اگر غبار ہوتا

    میں تجھے خدا سمجھ کر نہ گناہ گار ہوتا

    اگر ایک بے نیازی ہی ترا اشعار ہوتا

    جو ستم زدوں کا یارب کوئی غم گسار ہوتا

    تو غم حیات اتنا نہ دلوں پہ بار ہوتا

    مری زندگی میں شامل جو نہ تیرا پیار ہوتا

    تو نشاط دو جہاں بھی مجھے ناگوار ہوتا

    یہی مہر و ماہ و انجم کو گلہ ہے مجھ سے یارب

    کہ انہیں بھی چین ملتا جو مجھے قرار ہوتا

    نہ سکون دل کی چاہت میں تڑپ ادیبؔ اتنا

    کسی اور کو تو ملتا جو کہیں قرار ہوتا

    مآخذ:

    • کتاب : mahvar (Pg. 67)
    • Author : adeeb saharanpuri
    • مطبع : Narendra Nishchint 16.a/12 Western Extension area New Delhi

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY