مری آنکھوں سے ظاہر خوں فشانی اب بھی ہوتی ہے

اختر شیرانی

مری آنکھوں سے ظاہر خوں فشانی اب بھی ہوتی ہے

اختر شیرانی

MORE BYاختر شیرانی

    مری آنکھوں سے ظاہر خوں فشانی اب بھی ہوتی ہے

    نگاہوں سے بیاں دل کی کہانی اب بھی ہوتی ہے

    سرور آرا شراب ارغوانی اب بھی ہوتی ہے

    مرے قدموں میں دنیا کی جوانی اب بھی ہوتی ہے

    کوئی جھونکا تو لاتی اے نسیم اطراف کنعاں تک

    سواد مصر میں عنبر فشانی اب بھی ہوتی ہے

    وہ شب کو مشک بو پردوں میں چھپ کر آ ہی جاتے ہیں

    مرے خوابوں پر ان کی مہربانی اب بھی ہوتی ہے

    کہیں سے ہاتھ آ جائے تو ہم کو بھی کوئی لا دے

    سنا ہے اس جہاں میں شادمانی اب بھی ہوتی ہے

    ہلال و بدر کے نقشے سبق دیتے ہیں انساں کو

    کہ ناکامی بنائے کامرانی اب بھی ہوتی ہے

    کہیں اغیار کے خوابوں میں چھپ چھپ کر نہ جاتے ہوں

    وہ پہلو میں ہیں لیکن بدگمانی اب بھی ہوتی ہے

    سمجھتا ہے شکست توبہ اشک توبہ کو زاہد

    مری آنکھوں کی رنگت ارغوانی اب بھی ہوتی ہے

    وہ برساتیں وہ باتیں وہ ملاقاتیں کہاں ہمدم

    وطن کی رات ہونے کو سہانی اب بھی ہوتی ہے

    خفا ہیں پھر بھی آ کر چھیڑ جاتے ہیں تصور میں

    ہمارے حال پر کچھ مہربانی اب بھی ہوتی ہے

    زباں ہی میں نہ ہو تاثیر تو میں کیا کروں ناصح

    تری باتوں سے پیدا سرگرانی اب بھی ہوتی ہے

    تمہارے گیسوؤں کی چھاؤں میں اک رات گزری تھی

    ستاروں کی زباں پر یہ کہانی اب بھی ہوتی ہے

    پس توبہ بھی پی لیتے ہیں جام غنچہ و گل سے

    بہاروں میں جنوں کی مہمانی اب بھی ہوتی ہے

    کوئی خوش ہو مری مایوسیاں فریاد کرتی ہیں

    الٰہی کیا جہاں میں شادمانی اب بھی ہوتی ہے

    بتوں کو کر دیا تھا جس نے مجبور سخن اخترؔ

    لبوں پر وہ نوائے آسمانی اب بھی ہوتی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY