مری انا مرے دشمن کو تازیانہ ہے

اسعد بدایونی

مری انا مرے دشمن کو تازیانہ ہے

اسعد بدایونی

MORE BYاسعد بدایونی

    مری انا مرے دشمن کو تازیانہ ہے

    اسی چراغ سے روشن غریب خانہ ہے

    میں اک طرف ہوں کسی کنج کم نمائی میں

    اور ایک سمت جہانداری زمانہ ہے

    یہ طائروں کی قطاریں کدھر کو جاتی ہیں

    نہ کوئی دام بچھا ہے کہیں نہ دانہ ہے

    ابھی نہیں ہے مجھے مصلحت کی دھوپ کا خوف

    ابھی تو سر پہ بغاوت کا شامیانہ ہے

    مری غزل میں رجز کی ہے گھن گرج تو کیا

    سخن وری بھی تو کار سپاہیانہ ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    مری انا مرے دشمن کو تازیانہ ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY