Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

مری داستان الم تو سن کوئی زلزلہ نہیں آئے گا

بیدل حیدری

مری داستان الم تو سن کوئی زلزلہ نہیں آئے گا

بیدل حیدری

MORE BYبیدل حیدری

    مری داستان الم تو سن کوئی زلزلہ نہیں آئے گا

    مرا مدعا نہیں آئے گا ترا تذکرہ نہیں آئے گا

    مری زندگی کے النگ میں کئی گھاٹیاں کئی موڑ ہیں

    تری واپسی بھی ہوئی اگر تجھے راستہ نہیں آئے گا

    اگر آئے دن تری راہ میں تری کھوج میں تری چاہ میں

    یوں ہی قافلے جو لٹا کئے کوئی قافلہ نہیں آئے گا

    اگر آئے دشت میں جھیل تو مجھے احتیاط سے پھینکنا

    کہ میں برگ خشک ہوں دوستو مجھے ڈوبنا نہیں آئے گا

    مری عمر بھر کی برہنگی مجھے چھوڑ دے مرے حال پر

    یہ جو عکس ہے مرا ہم سفر مجھے اوڑھنا نہیں آئے گا

    کہیں انتہا کی ملامتیں کہیں پتھروں سے اٹی چھتیں

    ترے شہر میں مرے بعد اب کوئی سر پھرا نہیں آئے گا

    کوئی انتظار کا فائدہ مرے یار بیدل حیدریؔ

    تجھے چھوڑ کر جو چلا گیا نہیں آئے گا نہیں آئے گا

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے