مری گرفت میں ہے طائر خیال مرا

غلام مرتضی راہی

مری گرفت میں ہے طائر خیال مرا

غلام مرتضی راہی

MORE BYغلام مرتضی راہی

    مری گرفت میں ہے طائر خیال مرا

    مگر اڑائے لیے جا رہا ہے جال مرا

    یقین اتنا نہیں میرا جتنا نبض کا ہے

    مری زبان سے سنتا نہیں وہ حال مرا

    کمال کی وہ عمارت مری ہوئی مسمار

    کھنڈر کی شکل میں باقی رہا زوال مرا

    فضا میں جھونک دے آندھی کے بعد پانی بھی

    اڑائی خاک تو اب خون بھی اچھال مرا

    زبان اپنی بدلنے پہ کوئی راضی نہیں

    وہی جواب ہے اس کا وہی سوال مرا

    میں سر کیے ہوئے بیٹھا ہوں اک نئی چوٹی

    کچھ اور فاصلے سے دیکھ اب کمال مرا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY