مری جستجو کا حاصل مرا شوق والہانہ

ناز مرادآبادی

مری جستجو کا حاصل مرا شوق والہانہ

ناز مرادآبادی

MORE BYناز مرادآبادی

    مری جستجو کا حاصل مرا شوق والہانہ

    مری آرزو کی منزل نہ چمن نہ آشیانہ

    کوئی دل جہاں بنا ہے غم عشق کا نشانہ

    وہیں راس آ گئی ہے اسے گردش زمانہ

    کبھی یاد آ گئی ہے تو گھٹائیں چھا گئی ہیں

    میں کسے بتاؤں کیا ہے تری زلف کافرانہ

    مری شاعری میں پنہاں مرے دل کی دھڑکنیں ہیں

    مری ہر غزل ہے گویا غم عشق کا فسانہ

    یہ نظر نظر تباہی یہ قدم قدم مصیبت

    کہیں پست ہو نہ جائے مرا عزم فاتحانہ

    تری حمد کیا کریں گے یہ بیاں یہ لفظ و معنی

    ترا حسن بھی انوکھا تری ذات بھی یگانہ

    یہ فروغ گلستاں ہے کہ بہار سے عیاں ہے

    ترے حسن کی حقیقت مرے عشق کا فسانہ

    مری ہر غزل ہے گویا مری زندگی کا حاصل

    کہ ہر ایک شعر میں ہے مرا سوز عاشقانہ

    یہ ہے ناز شوق انساں کہ رسائی ہے فلک تک

    مرے درد دل کو لیکن نہ سمجھ سکا زمانہ

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY