مثال عکس مرے آئنے میں ڈھلتا رہا

یاسمین حمید

مثال عکس مرے آئنے میں ڈھلتا رہا

یاسمین حمید

MORE BYیاسمین حمید

    مثال عکس مرے آئنے میں ڈھلتا رہا

    وہ خد و خال بھی اپنے مگر بدلتا رہا

    میں پتھروں پہ گری اور خود سنبھل بھی گئی

    وہ خامشی سے مرے ساتھ ساتھ چلتا رہا

    اجالا ہوتے ہی کیسے اسے بجھاؤں گی

    اگر چراغ مرا تا بہ صبح جلتا رہا

    میں اس کے معنی و مقصد کے سنگ چنتی رہی

    وہ ایک حرف جو احساس کو کچلتا رہا

    زمیں خلوص کی مٹی سے بے نیاز رہی

    رفاقتوں کا شجر واہموں پہ پلتا رہا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY