مثل باد صبا تیرے کوچے میں اے جان جاں آئے ہیں

اطہر نفیس

مثل باد صبا تیرے کوچے میں اے جان جاں آئے ہیں

اطہر نفیس

MORE BYاطہر نفیس

    مثل باد صبا تیرے کوچے میں اے جان جاں آئے ہیں

    چند ساعت رہیں گے چلے جائیں گے سر گراں آئے ہیں

    شام آزردگی کے ستائے ہوئے چوٹ کھائے ہوئے

    مہرباں ہو کے مل ہم بہت آج نا شادماں آئے ہیں

    عشق کرنا جو سیکھا تو دنیا برتنے کا فن آ گیا

    کاروبار جنوں آ گیا ہے تو کار جہاں آئے ہیں

    زخم کھلنے لگے پھر ابھرنے لگیں دل کی محرومیاں

    یاد پھر تیرے انداز‌ دلداریٔ جسم و جاں آئے ہیں

    داستان شب ہجر ان کو سنانے کا دن یہ نہیں

    محفل عشق میں آج ہی تو وہ کچھ مہرباں آئے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY