مٹ گیا غم ترے تکلم سے

اعجاز رحمانی

مٹ گیا غم ترے تکلم سے

اعجاز رحمانی

MORE BYاعجاز رحمانی

    مٹ گیا غم ترے تکلم سے

    لب ہوئے آشنا تبسم سے

    کس کے نقش قدم ہیں راہوں میں

    جگمگاتے ہیں ماہ و انجم سے

    ہے زمانہ بڑا زمانہ شناس

    کبھی مجھ سے گلا کبھی تم سے

    ناخدا بھی ملا تو ایسا ملا

    آشنا جو نہیں تلاطم سے

    اس نے آ کر مزاج پوچھ لیا

    ہم تو بیٹھے ہوئے تھے گم صم سے

    ناخدا نے ڈبو دیا ان کو

    وہ کہ جو بچ گئے تلاطم سے

    زندگی حادثوں کی زد میں ہے

    کوئی کیسے بچے تصادم سے

    سایۂ گل میں بیٹھنے والو

    گفتگو ہوگی دار پر تم سے

    میں غزل کا اسیر ہوں اعجازؔ

    شعر پڑھتا ہوں میں ترنم سے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے