مٹی مٹی ہوئی یادوں کے داغ کیا جلتے؟

صوفی تبسم

مٹی مٹی ہوئی یادوں کے داغ کیا جلتے؟

صوفی تبسم

MORE BYصوفی تبسم

    مٹی مٹی ہوئی یادوں کے داغ کیا جلتے؟

    نہ تھی شراب میں گرمی ایاغ کیا جلتے؟

    فسردہ ہو گئے صحن چمن کے پروانے

    ملا نہ آتش گل کا سراغ کیا جلتے؟

    دبے دبے رہے سینے میں آرزو کے داغ

    تمہارے حسن کے آگے چراغ کیا جلتے؟

    بہار میں بھی جگر سوزئ بہار نہ تھی

    یہ کوہ و دشت و چمن باغ و راغ کیا جلتے؟

    جلن بہت تھی غم زندگی کے شعلوں میں

    بہت فسردہ تھے صاحب فراغ کیا جلتے؟

    وفا سے اہل ہوس کو سرور کیا ملتا؟

    خرد فروز تھے یہ بے دماغ کیا جلتے؟

    مأخذ :
    • کتاب : (Sau Baar Chaman Mahka)Kulliyat-e- Sufi Tabassum (Pg. 220)
    • Author : Sufi Ghulam Mustafa Tabassum
    • مطبع : Alhamd Publications, Lahore (2008)
    • اشاعت : 2008

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY