معتبر سے رشتوں کا سائبان رہنے دو

عذرا نقوی

معتبر سے رشتوں کا سائبان رہنے دو

عذرا نقوی

MORE BYعذرا نقوی

    معتبر سے رشتوں کا سائبان رہنے دو

    مہرباں دعاؤں میں خاندان رہنے دو

    مضمحل سے بام و در خستہ حال دیواریں

    باپ کی نشانی ہے وہ مکان رہنے دو

    پھیلتے ہوئے شہرو اپنی وحشتیں روکو

    میرے گھر کے آنگن پر آسمان رہنے دو

    آنے والی نسلیں خود حل تلاش کر لیں گی

    آج کے مسائل کو خوش گمان رہنے دو

    الجھے الجھے ریشم کی ڈور سے بندھے رشتے

    ہر گھڑی محبت کا امتحان رہنے دو

    کیا بہت ضروری ہے ساری بات کہہ ڈالیں

    جگنوؤں سے کچھ لمحے درمیان رہنے دو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY