محبت کا وعدہ نبھایا ہے میں نے

گلشن بیابانی

محبت کا وعدہ نبھایا ہے میں نے

گلشن بیابانی

MORE BYگلشن بیابانی

    محبت کا وعدہ نبھایا ہے میں نے

    زمانے کو نیچا دکھایا ہے میں نے

    کہیں وقت اس کو نہ مسمار کر دے

    محل آرزو کا بنایا ہے میں نے

    وہ مجھ سے بھی آگے بڑھا جا رہا ہے

    جسے پاؤں چلنا سکھایا ہے میں نے

    زمانہ پہ چھایا ہوا تھا اندھیرا

    اندھیرے میں دیپک جلایا ہے میں نے

    مصیبت میں تم کیا مرا ساتھ دو گے

    تمہیں بارہا آزمایا ہے میں نے

    سفینہ اسی نے ڈبویا ہے میرا

    جسے ڈوبنے سے بچایا ہے میں نے

    بہار سخن مجھ سے منسوب کر دو

    بیاباں کو گلشنؔ بنایا ہے میں نے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY