مہمل ہے نہ جانیں تو، سمجھیں تو وضاحت ہے

قیصر خالد

مہمل ہے نہ جانیں تو، سمجھیں تو وضاحت ہے

قیصر خالد

MORE BYقیصر خالد

    مہمل ہے نہ جانیں تو، سمجھیں تو وضاحت ہے

    ہے زیست فقط دھوکا اور موت حقیقت ہے

    ہم پر یہ عنایت بھی، کیا تیری محبت ہے

    آنا بھی قیامت ہے جانا بھی قیامت ہے

    کھلتا ہی نہیں اس کی ان خاص اداؤں میں

    تمہید محبت ہے، ضد ہے کہ شرارت ہے

    توہین وفا ہے یہ، ہنگامہ ہے کیوں اتنا

    اس دشت وفا میں کیا پہلی یہ شہادت ہے

    بدلا ہے زمانہ بس، حالات نہیں بدلے

    حق گوئی میں لوگوں کو اب بھی تو قباحت ہے

    اک ضد کے سبب دونوں مشکوک ہیں اب تک بھی

    انکار ہے ہونٹوں پر آنکھوں میں محبت ہے

    یہ معرکہ آرائی کیا ایک طرف سے تھی

    کچھ اپنے کئے پر بھی کیا تم کو ندامت ہے

    کچھ تو ہی بتا آخر کیوں کر ترے بندوں پر

    ہر شب ہے نئی آفت ہر روز مصیبت ہے

    مانا، ہو تماشائی تم ظلم مسلسل کے

    لیکن یہ خموشی بھی ظالم کی حمایت ہے

    تو اپنی خطاؤں پر نادم بھی ذرا ہو جا

    اے دوست اگر تجھ میں تھوڑی بھی شرافت ہے

    کچھ دہر پرستوں نے سفاک دلی برتی

    کچھ حد سے زیادہ ہی ہم میں بھی شرافت ہے

    کیا شوق جنوں تھا جو آئے تھے یہاں خالدؔ

    اس دشت وفا میں تو ہر لمحہ اذیت ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے