مومنؔ خدا کے واسطے ایسا مکاں نہ چھوڑ

مومن خاں مومن

مومنؔ خدا کے واسطے ایسا مکاں نہ چھوڑ

مومن خاں مومن

MORE BYمومن خاں مومن

    مومنؔ خدا کے واسطے ایسا مکاں نہ چھوڑ

    دوزخ میں ڈال خلد کو کوئے بتاں نہ چھوڑ

    عاشق تو جانتے ہیں وہ اے دل یہی سہی

    ہر چند بے اثر ہے پر آہ و فغاں نہ چھوڑ

    اس طبع نازنیں کو کہاں تاب انفعال

    جاسوس میرے واسطے اے بد گماں نہ چھوڑ

    ناچار دیں گے اور کسی خوب رو کو دل

    اچھا تو اپنی خوئے بد اے بد زباں نہ چھوڑ

    زخمی کیا عدو کو تو مرنا محال ہے

    قربان جاؤں تیرے مجھے نیم جاں نہ چھوڑ

    کچھ کچھ درست ضد سے تری ہو چلے ہیں وہ

    یک چند اور کج روی اے آسماں نہ چھوڑ

    جس کوچہ میں گزار صبا کا نہ ہو سکے

    اے عندلیب اس کے لیے گلستاں نہ چھوڑ

    گر پھر بھی اشک آئیں تو جانوں کہ عشق ہے

    حقہ کا منہ سے غیر کی جانب دھواں نہ چھوڑ

    ہوتا ہے اس جحیم میں حاصل وصال جور

    مومنؔ عجب بہشت ہے دیر مغاں نہ چھوڑ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY