مدت ہوئی نہ مجھ سے مرا رابطہ ہوا

ذاکر خان ذاکر

مدت ہوئی نہ مجھ سے مرا رابطہ ہوا

ذاکر خان ذاکر

MORE BYذاکر خان ذاکر

    مدت ہوئی نہ مجھ سے مرا رابطہ ہوا

    خود کو تلاش کرتے ہوئے گمشدہ ہوا

    سب رہنما ہے کون کسی اور کی سنے

    منزل سے دور یوں ہی نہیں قافلہ ہوا

    ایسے ملا وہ آج مجھے اجنبی لگا

    ملنا بھی جیسے اس کا کوئی سانحہ ہوا

    لگتی ہے اب فضول ترے قرب کی دعا

    ہونا تھا جب قریب تبھی فاصلہ ہوا

    میں نے تو بس کہا تھا اسے جانتا ہوں میں

    پھر شہر میں ہم ہی پہ بڑا تبصرہ ہوا

    جوش جنوں میں چپکے سے شہ رگ ہی کاٹ لی

    کہنے کو کو لوگ کہتے رہے حادثہ ہوا

    خاموش دو دلوں میں کہیں میل تھا ضرور

    ورنہ تھا کیا سبب کہ جدا راستہ ہوا

    ذاکرؔ یہ زندگی کی حقیقت سراب ہے

    جب آگہی ملی تو یہی تجربہ ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY