مدت ہوئی اس جان حیا نے ہم سے یہ اقرار کیا

جاں نثاراختر

مدت ہوئی اس جان حیا نے ہم سے یہ اقرار کیا

جاں نثاراختر

MORE BY جاں نثاراختر

    مدت ہوئی اس جان حیا نے ہم سے یہ اقرار کیا

    جتنے بھی بد نام ہوئے ہم اتنا اس نے پیار کیا

    پہلے بھی خوش چشموں میں ہم چوکنا سے رہتے تھے

    تیری سوئی آنکھوں نے تو اور ہمیں ہوشیار کیا

    جاتے جاتے کوئی ہم سے اچھے رہنا کہہ تو گیا

    پوچھے لیکن پوچھنے والے کس نے یہ بیمار کیا

    قطرہ قطرہ صرف ہوا ہے عشق میں اپنے دل کا لہو

    شکل دکھائی تب اس نے جب آنکھوں کو خوں بار کیا

    ہم پر کتنی بار پڑے یہ دورے بھی تنہائی کے

    جو بھی ہم سے ملنے آیا ملنے سے انکار کیا

    عشق میں کیا نقصان نفع ہے ہم کو کیا سمجھاتے ہو

    ہم نے ساری عمر ہی یارو دل کا کاروبار کیا

    محفل پر جب نیند سی چھائی سب کے سب خاموش ہوئے

    ہم نے تب کچھ شعر سنایا لوگوں کو بے دار کیا

    اب تم سوچو اب تم جانو جو چاہو اب رنگ بھرو

    ہم نے تو اک نقشہ کھینچا اک خاکہ تیار کیا

    دیش سے جب پردیش سدھارے ہم پر یہ بھی وقت پڑا

    نظمیں چھوڑی غزلیں چھوڑی گیتوں کا بیوپار کیا

    مآخذ:

    • کتاب : urdu kii chunii hu.ii gazale.n (Pg. 88)
    • مطبع : sahityaa parkaashak maalbaara delhi (sahityaa parkaashak maalbaara delhi )
    • اشاعت : 1963

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY