مدتوں بعد ہم کسی سے ملے

مخمور سعیدی

مدتوں بعد ہم کسی سے ملے

مخمور سعیدی

MORE BYمخمور سعیدی

    مدتوں بعد ہم کسی سے ملے

    یوں لگا جیسے زندگی سے ملے

    اس طرح کوئی کیوں کسی سے ملے

    اجنبی جیسے اجنبی سے ملے

    ساتھ رہنا مگر جدا رہنا

    یہ سبق ہم کو آپ ہی سے ملے

    ذکر کانٹوں کی دشمنی کا نہیں

    زخم پھولوں کی دوستی سے ملے

    ان کا ملنا بھی تھا نہ ملنا سا

    وہ ملے بھی تو بے رخی سے ملے

    دل نے مجبور کر دیا ہوگا

    جس سے ملنا نہ تھا اسی سے ملے

    ان اندھیروں کا کیا گلہ مخمورؔ

    وہ اندھیرے جو روشنی سے ملے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    مدتوں بعد ہم کسی سے ملے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY