مجھ کو سمجھو یادگار رفتگان لکھنؤ

نظم طبا طبائی

مجھ کو سمجھو یادگار رفتگان لکھنؤ

نظم طبا طبائی

MORE BYنظم طبا طبائی

    مجھ کو سمجھو یادگار رفتگان لکھنؤ

    ہوں قد آدم غبار کاروان لکھنؤ

    خون حسرت کہہ رہا ہے داستان لکھنؤ

    رہ گیا ہے اب یہی رنگیں بیان لکھنؤ

    گوش عبرت سے سنے کوئی مری فریاد ہے

    بلبل خونیں نوائے بوستان لکھنؤ

    میرے ہر آنسو میں اک آئینۂ تصویر ہے

    میرے ہر نالہ میں ہے طرز فغان لکھنؤ

    ڈھونڈھتا ہے اب کسے لے کر چراغ آفتاب

    کیوں مٹایا اے فلک تو نے نشان لکھنؤ

    لکھنؤ جن سے عبارت تھی ہوئے وہ ناپدید

    ہے نشان لکھنؤ باقی نہ شان لکھنؤ

    اب نظر آتا نہیں وہ مجمع اہل کمال

    کھا گئے ان کو زمین و آسمان لکھنؤ

    پہلے تھا اہل زباں کا دور اب گردش میں ہیں

    چاہئے تھی تیغ اردو کو فسان لکھنؤ

    مرثیہ گو کتنے یکتائے زمانہ تھے یہاں

    کوئی تو اتنوں میں ہوتا نوحہ خوان لکھنؤ

    یہ غبار ناتواں خاکستر پروانہ ہے

    خاندان اپنا تھا شمع دودمان لکھنؤ

    چلتا تھا جب گھٹنیوں اپنے یہاں طفل رضیع

    سجدہ کرتے تھے اسے گردن کشان لکھنؤ

    عہد پیرانہ سری میں کیوں نہ شیریں ہو سخن

    بچپنے میں میں نے چوسی ہے زبان لکھنؤ

    گلشن فردوس پر کیا ناز ہے رضواں تجھے

    پوچھ اس کے دل سے جو ہے رتبہ دان لکھنؤ

    بوئے انس آتی ہے حیدرؔ خاک مٹیا برج سے

    جمع ہیں اک جا وطن آوارگان لکھنؤ

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY