مجھ کو یہ جان و دل قبول نغمے کو نغمہ ہی سمجھ

خمارؔ بارہ بنکوی

مجھ کو یہ جان و دل قبول نغمے کو نغمہ ہی سمجھ

خمارؔ بارہ بنکوی

MORE BY خمارؔ بارہ بنکوی

    مجھ کو یہ جان و دل قبول نغمے کو نغمہ ہی سمجھ

    ساز یہ بیتتی ہے کیا یہ بھی کبھی کبھی سمجھ

    عشق ہے تشنگی کا نام توڑ دے گر ملے بھی جام

    شدت تشنگی نہ دیکھ لذت تشنگی سمجھ

    حسن کی مہربانیاں عشق کے حق میں زہر ہیں

    حسن کے اجتناب تک عشق کی زندگی سمجھ

    ترک تعلقات بھی عین تعلقات ہے

    آگ بجھی ہوئی نہ جان آگ دبی ہوئی سمجھ

    عقل کے کاروبار میں دل کو بھی رکھ شریک کار

    دل کے معاملات میں عقل کو اجنبی سمجھ

    غنچہ و گل کے ساتھ ساتھ دل کی طرف بھی اک نظر

    شیفتۂ شگفتگی وجہ شگفتگی سمجھ

    ایسے بھی راز ہیں خمارؔ ہوتے نہیں جو آشکار

    اپنی ہی مشکلیں نہ دیکھ ان کی بھی بے بسی سمجھ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY