مجھ قبر سے یار کیونکے جاوے

ولی عزلت

مجھ قبر سے یار کیونکے جاوے

ولی عزلت

MORE BYولی عزلت

    مجھ قبر سے یار کیونکے جاوے

    ہے شمع مزار کیونکے جاوے

    رہتا ہے رقیب نت تیرے سنگ

    چھاتی کا پہاڑ کیونکے جاوے

    حیراں ہوئے بسکہ منہ تیرا دیکھ

    گلشن سے بہار کیونکے جاوے

    ہے ہجر کی رات سنسناتی

    ناگن سے پھنکار کیونکے جاوے

    نت ہے مرا کینہ اس کے دل میں

    پتھر سے شرار کیونکے جاوے

    کس وجہ اٹھے وہ منہ سے یہ دل

    گلشن سے ہزار کیونکے جاوے

    گلزار کو فصل گل میں عاشق

    پے لالۂ داغدار کیونکے جاوے

    ہے بزم بتوں سے شیخ محروم

    جنت میں حمار کیونکے جاوے

    منہ سے تیرے سرکے زلف کس وجہ

    گلزار سے مار کیونکے جاوے

    کیوں کر کروں ضبط آہ قاتل

    گھائل سے پکار کیونکے جاوے

    جیتا ہے اسی گلی میں عزلتؔ

    جب جی دیا ہار کیونکے جاوے

    مآخذ :
    • Deewan-e-uzlat(Rekhta Website)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY