مجھے اے اہل کعبہ یاد کیا مے خانہ آتا ہے

داغؔ دہلوی

مجھے اے اہل کعبہ یاد کیا مے خانہ آتا ہے

داغؔ دہلوی

MORE BYداغؔ دہلوی

    مجھے اے اہل کعبہ یاد کیا مے خانہ آتا ہے

    ادھر دیوانہ جاتا ہے ادھر مستانہ آتا ہے

    مری مژگاں سے آنسو پوچھتا ہے کس لئے ناصح

    ٹپک پڑتا ہے خود جو اس شجر میں دانہ آتا ہے

    یہ آمد ہے کہ آفت ہے نگہ کچھ ہے ادا کچھ ہے

    الٰہی خیر مجھ سے آشنا بیگانہ آتا ہے

    دم تقریر نالہ حلق میں چھریاں چبھوتے ہیں

    زباں تک ٹکڑے ہو ہو کر مرا افسانہ آتا ہے

    رخ روشن کے آگے شمع رکھ کر وہ یہ کہتے ہیں

    ادھر جاتا ہے دیکھیں یا ادھر پروانہ آتا ہے

    جگر تک آتے آتے سو جگہ گرتا ہوا آیا

    ترا تیر نظر آتا ہے یا مستانہ آتا ہے

    وہی جھگڑا ہے فرقت کا وہی قصہ ہے الفت کا

    تجھے اے داغؔ کوئی اور بھی افسانہ آتا ہے

    مآخذ :
    • کتاب : Ghazal Usne Chhedi(3) (Pg. 233)
    • Author : Farhat Ehsas
    • مطبع : Rekhta Books (2017)
    • اشاعت : 2017

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY