مجھے اداس کر گئے ہو خوش رہو

فاضل جمیلی

مجھے اداس کر گئے ہو خوش رہو

فاضل جمیلی

MORE BYفاضل جمیلی

    مجھے اداس کر گئے ہو خوش رہو

    مرے مزاج پر گئے ہو خوش رہو

    مرے لیے نہ رک سکے تو کیا ہوا

    جہاں کہیں ٹھہر گئے ہو خوش رہو

    خوشی ہوئی ہے آج تم کو دیکھ کر

    بہت نکھر سنور گئے ہو خوش رہو

    اداس ہو کسی کی بے وفائی پر

    وفا کہیں تو کر گئے ہو خوش رہو

    گلی میں اور لوگ بھی تھے آشنا

    ہمیں سلام کر گئے ہو خوش رہو

    تمہیں تو میری دوستی پہ ناز تھا

    اسی سے اب مکر گئے ہو خوش رہو

    کسی کی زندگی بنو کہ بندگی

    مرے لیے تو مر گئے ہو خوش رہو

    مآخذ :
    • کتاب : Ghazal Calendar-2015 (Pg. 04.10.2015)

    موضوعات:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY