منہ کہاں یہ کہ کہوں جائیے اور سو رہئے

میر حسن

منہ کہاں یہ کہ کہوں جائیے اور سو رہئے

میر حسن

MORE BYمیر حسن

    منہ کہاں یہ کہ کہوں جائیے اور سو رہئے

    خوب گر نیند ہے تو آئیے اور سو رہئے

    تکیہ زانو کا مرے کیجیے بے خوف و خطر

    آپ تشریف ادھر لائیے اور سو رہئے

    آج کی چاندنی وہ ہے کہ کسی شوخ کے ساتھ

    کھول آغوش لپٹ جائیے اور سو رہئے

    یوں تو ہرگز نہیں آنے کی تمہیں نیند مگر

    مجھ سے قصہ مرا کہوائیے اور سو رہئے

    غم رہا تھا مری باتوں کا تمہیں کس کس دن

    منہ مرا آپ نہ کھلوایئے اور سو رہئے

    گر رہیں ہم بھی کہیں پائنتی اب جائیں کہاں

    آپ اتنا ہمیں فرمائیے اور سو رہئے

    بخت جاگے ہیں شب ماہ میں جو یار ہے پاس

    چاندنی تخت پہ بچھوائیے اور سو رہئے

    اس ادا کا ہوں میں دیوانہ کہ انگڑائی لے

    مجھ سے کہتا ہے کہیں جائیے اور سو رہئے

    ڈر خدا کا ہے نہیں اور صنم کو لے کر

    ایک جا پر تجھے دکھلائیے اور سو رہئے

    تپش عشق کی گرمی سے جلے جاتے ہیں

    چھاؤں ٹھنڈی کہیں ٹک پائیے اور سو رہئے

    یہ بلا فکر سے کچھ نید ہوئی ہے حسنؔ

    جی میں آتا ہے کہ کچھ کھائیے اور سو رہئے

    مآخذ:

    • کتاب : Dehli Ka Dabistan-e-shayari (Pg. 272)
    • Author : Meer Gulam Hasan
    • مطبع : Uttar Pardesh Urdu Acadmy (1997)
    • اشاعت : 1997

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY