منتظر کب سے تحیر ہے تری تقریر کا

احمد فراز

منتظر کب سے تحیر ہے تری تقریر کا

احمد فراز

MORE BY احمد فراز

    منتظر کب سے تحیر ہے تری تقریر کا

    بات کر تجھ پر گماں ہونے لگا تصویر کا

    رات کیا سوئے کہ باقی عمر کی نیند اڑ گئی

    خواب کیا دیکھا کہ دھڑکا لگ گیا تعبیر کا

    کیسے پایا تھا تجھے پھر کس طرح کھویا تجھے

    مجھ سا منکر بھی تو قائل ہو گیا تقدیر کا

    جس طرح بادل کا سایہ پیاس بھڑکاتا رہے

    میں نے یہ عالم بھی دیکھا ہے تری تصویر کا

    جانے کس عالم میں تو بچھڑا کہ ہے تیرے بغیر

    آج تک ہر نقش فریادی مری تحریر کا

    عشق میں سر پھوڑنا بھی کیا کہ یہ بے مہر لوگ

    جوئے خوں کو نام دے دیتے ہیں جوئے شیر کا

    جس کو بھی چاہا اسے شدت سے چاہا ہے فرازؔ

    سلسلہ ٹوٹا نہیں ہے درد کی زنجیر کا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    احمد فراز

    احمد فراز

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    منتظر کب سے تحیر ہے تری تقریر کا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY