مروت کا پاس اور وفا کا لحاظ

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

مروت کا پاس اور وفا کا لحاظ

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    مروت کا پاس اور وفا کا لحاظ

    کرے آشنا آشنا کا لحاظ

    دم سجدہ سر سخت تھا بے ادب

    کیا کچھ نہ اس نقش پا کا لحاظ

    نہ محروم رکھ مجھ کو حسن قبول

    رہے کچھ تو دست دعا کا لحاظ

    وہ ہیں پاس اب بس کر اے درد دل

    کرے کچھ مرض بھی دوا کا لحاظ

    ملائی نہ وحشتؔ کبھی اس سے آنکھ

    مجھے تھا جو اس کی حیا کا لحاظ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY